27 برس قبل لاپتہ ہونے والا شخص پڑوسی کے گھر سے مل گیا

تصویر سوشل میڈیا۔
تصویر سوشل میڈیا۔

27 برس قبل لاپتہ ہونے والا نوجوان پڑوس کے مکان کے تہہ خانے سے مل گیا جو اس کے گھر سے صرف 200 میٹر کے فاصلے پر ہے۔ 

شمالی افریقہ کے ملک الجزائر کے شہر جیلفا سے 27 برس قبل 1998 میں عمر بن اومران اسکول جاتے ہوئے غائب ہوا۔ اس زمانے میں الجزائر میں خانہ جنگی عروج پر تھی اور بہت زیادہ لاقانویت اور قتل غارت تھی۔ 

عمر بن اومران کے زیادہ تر خاندان کے افراد اور دوستوں کو خدشہ تھا کہ وہ خانہ جنگی کے دوران ہلاک ہونیوالے دو لاکھ افراد میں شامل ہے یا پھر ان بیس ہزار افراد میں ہے جو اغوا کرلیے گئے۔ 

کافی عرصہ بعد مقامی حکام نے اسکی تلاش ترک کردی تھی لیکن اسکی دکھی ماں اسکی واپسی کی منتظر تھی۔ بد قسمتی سے  2013 میں اسکی والدہ کا انتقال ہوگیا۔ 

تاہم اس ہفتے کے اوائل میں عمر کے پڑوس کے ایک شخص کے بھائی نے سوشل میڈیا پر پوسٹ شیئر کرتے ہوئے بتایا کہ اسکا بھائی عمر کے اغوا میں ملوث تھا۔ 

یہ انکشاف مذکورہ شخص نے اپنے بھائی کے ساتھ وراثت کے جھگڑے کے بعد کیا تاکہ وہ گرفتار ہو اور ایسا ہی ہوا جب عمر کے خاندان کے لوگوں نے یہ پوسٹ دیکھی تو پولیس سے رابطہ کیا جس نے مشکوک گھر کی تلاشی کے دوران مویشیوں کے چارہ رکھنے کے تہہ خانے سے 12 مئی کو عمر کو بازیاب کیا جو کہ اب 44 سال کا ہوچکا ہے۔

عمر کو اغوا اور قید کرنے والے 61 سالہ ملزم نے اس موقع پر فرار کی ناکام کوشش کی، لیکن پولیس نے اسے قابو کرلیا۔ اس موقع پر عمر اپنے چھوٹے سے قید خانے پر مبنی سیل میں کافی کنفیوز نظر آیا، بعدازاں ڈاکٹروں نے اسکے معائنے کے بعد بتایا کہ وہ جسمانی اور ذہنی مسائل کا شکار ہے۔ 

یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ ملزم نے عمر کے کتے کو بھی مار ڈالا جو کہ پڑوسیوں کے مطابق اکثر اس گھر کے اطراف چکر لگاتا نظر آتا تھا۔ عمر نے بتایا کہ اس نے اپنے اس سیل سے اکثر اپنے گھر والوں کو آتے جاتے دیکھا لیکن وہ انھیں اپنی مدد کے لیے بلانے سے قاصر تھا۔



اپنی رائے کا اظہار کریں